کارزار 1

انورغازی

"اخلاقیات کا جنازہ!"

موجودہ حکومت اور اپوزیشن نے اخلاقیات کا جنازہ نکال دیا ہے۔ سیاست دان ذرا ہوش کے ناخن لیں۔ یہ ہماری قوم اور نئی جنریشن کو کیا سبق دے رہے ہیں؟؟ دیکھیے! انگریز نے ایک عرصے تک ہندوستان پر حکومت کی۔ ان کے ہاں بھی کچھ مسلّمہ اصول، ضوابط اور قوانین ہوا کرتے تھے۔ ”وائسرائے ہند“ ان کی مکمل پابندی کیا کرتے تھے۔ بر صغیر پاک و ہند سے انگریز کے جانے کے بعد اس خطے کے سیاست دانوں کے ہاں بھی کچھ اصول ہوا کرتے تھے۔ گاندھی ہو یا محمد علی جناح، جواہر لال نہرو ہو یا ابو الکلام آزاد، شاستری ہو یا لیاقت علی خان.... اس زمانے کے عمام سیاست دان چند مسلّمہ قوانین کی پابندی کیا کرتے تھے۔ قیامِ پاکستان کے بعد کے سیاست دانوں نے، چاہے سندھ کے جی ایم سید ہوں یا سرحد کے خان عبد الغفار خان، بلوچستان کے اکبر بگٹی اور خیر بخش مری ہوں یا پنجاب کے نواب زادہ نصر اللہ خان.... ان حضرات نے ایک دوسرے سے شدید ترین اختلافات رکھنے کے باوجود کچھ اصول، قوانین اور روایات کی پابندی اور پاسداری کی۔

ان اکابر سیاست دانوں کا طرزِ عمل ہماری آج کی نئی نسل کے سامنے نہیں تو تاریخ کے اوراق میں ضرور محفوظ ہے۔مزید پیچھے چلے جائیں۔”چانکیہ“ کی تعلیمات میں وعدہ خلافی، جھوٹ، مکر و فریب اور دھوکا دہی سے کام لے کر اپنے مخالف کو زیر کرنا بے حد ضروری ہے۔ ان جیسے درجنوں ”سنہری اصلو“ تھے جن پر ”چندر گپت موریہ“ نے پوری زندگی عمل در آمد کیا۔ نتیجے میں وہ ہندوستان کے ایک وسیع علاقے پر حکومت کرتا رہا۔ چانکیہ کے فلسفے سے اتفاق کرتے ہوئے بعد کے بھی کئی حکمران اس پر عمل کرتے آ رہے ہیں بلکہ اب تو ان کے فلسفے کو عالمی شہرت مل چکی ہے۔ شاید انہی فلسفوں کو مشعلِ راہ مان کر ہمارے حکمران بھی اتنا جھوٹ بولتے ہیں کہ بعض اوقات خود بھی شرما جاتے ہیں اور قوم سے معذرت کرنا پڑتی ہے۔

اسی طرح یونان کے عظیم فلسفی سقراط، افلاطون اور ارسطو وغیرہ نے ”ڈیموکریسی“ کا تصور پیش کیا۔ ان یونان کے فلسفیوں نے خیالی تصور پر مبنی حکومتی ڈھانچہ پیش کیا۔ اسی بنیاد پر جمہوریت پر کتابیں لکھیں۔ سیاست پر افلاطون کی کتاب کا نام ہی ”جمہوریہ“‘ ہے، لیکن وہاں جمہوریت کا جو تصور تھا، وہ نسبتاً سادہ اور محدود تھا۔ سادہ اس معنی میں کہ یونان میں جو ریاستیں تھیں، وہ شہری ریاستیں کہلاتی تھیں۔یہ نظام سولہویں عیسوی صدی تک چلتا رہا۔ 17 ویں عیسوی صدی کے بعد یونان کی جمہوریت کا تصور عملاً ختم ہو گیا تھا۔ اس کی جگہ مطلق العنان بادشاہ نے لی تھی۔ پھر اس تصور کا احیاءاور تجدید 18 ویں صدی کے آغاز میں ہوئی۔ اس کے بعد ہی جمہوریت نے ایک منضبط اور مضبوط شکل اختیار کی۔ وہ جمہوریت وجود میں آئی جو آج جمہوریت کہلاتی ہے جس کا نام ”لبرل ڈیموکریسی“ ہے۔

آج امریکا و یورپ کے اکثر ممالک میں یہی ”لبرل ڈیموکریسی“ نافذ ہے۔ امریکا و یورپ کی پوری کوشش ہے کہ پوری دنیا میں یہ اپنے تمام اثرات کے ساتھ نافذ ہو جائے۔ یہ پندرہویں عیسوی صدی کی بات ہے۔ اٹلی اپنے بدترین دور سے گزر رہا تھا۔ ملک کی اقتصادی، معاشرتی اور سیاسی صورتِ حال انتہائی نا گفتہ بہ تھی۔ عوام ظلم کی چکی میں پس رہے تھے تو ایسے حالات میں ”میکا ولی“ اٹلی کے لیے نجات دہندہ بن کر آیا۔ یہ اٹلی کے شہر ”فلورنس“ کا باشندہ تھا۔ اس نے بھی وقت کے بادشاہ کو بہت ہی قیمتی مشورے دیے۔ اس کے چند گُر اور اصول یہ ہیں: اپنے ذاتی اغراض و مقاصد کو اولین ترجیح دو اور ان کا حصول سرفہرست رکھو۔ طاقتور حکمران کو کمزور عوام پر ڈرانے، دھمکانے والے قوانین نافذ کرنے چاہییں تاکہ ان کی سرکشی اور بغاوت کو کچلا جا سکے۔

بے رحمی، سفاکیت اور ظالمانہ روش وہ لازمی اوصاف ہیں جن کے بغیر کسی اچھی حکمرانی کا تصور بھی محال ہے۔ خوف و ہراس کی فضا انتہائی ضروری ہے تاکہ ریاست کی حکمرانی موثر انداز سے عمل پذیر ہوتی رہے۔ دبدبہ، ڈر اور رُعب سے متاثر کرنے کے مواقع سے فائدہ اٹھاو ¿۔ ایک اچھے حکمران کے لیے ضروری ہے کہ وہ اپنے دشمنوں کو فنا کے گھاٹ اتار دے۔ جب تم اپنے دشمن پر غلبہ حاصل کر لو تو اس کے خاندان اور عزیز و اقارب کا نشان مٹا دو ورنہ اس کے کچھ رشتہ دار کسی زمانے میں قوت حاصل کر کے تم سے تمہاری غلط کاریوں کا انتقام لے سکتے ہیں۔“ کہنے کا مقصد یہ ہے کہ دنیا کی دو ہزار سالہ معلوم تاریخ کے اوراق شاہد ہیں کہ ہر دور میں چند مسلّمہ اصول، ضوابط،قانون اور اخلاقیات ہوا کرتی تھی ،جس کی پابندی اور پاسداری ہرحکمران اور عوام ہر طبقہ کیا کرتا تھا ۔زمانہ جاہلیت میں بھی چند مسلّمہ اخلاقیات کا لحاظ کیا جاتا تھا۔ کیا ہمارے آج کے حکمران،اپوزیشن اور سیاستدان زمانہ جاہلیت کے حکمرانوں سے بھی اخلاقی گراوٹ میں پیچھے جانے کا ارادہ رکھتے ہیں ؟؟؟ دوسرے کالمز پڑھئے۔ آج کی بات www.darsequran.com

karzaar01 AnwarGhazi

Darsequran1 Fb Likes
Darsequran1 YT Subscribers
Videos on Social Media
poodleşehirler arası nakliyatantika alanlarAntika alan yerlereski kitap alanlarantika eşya alanlaristanbul hayır lokmasıbatman evden eve nakliyattuzla nakliyatmersin evden eve nakliyatçankaya evden eve nakliyatgölbaşı evden eve nakliyatniğde evden eve nakliyatEtimesgut evden eve nakliyateskişehir uydu tamirmersin nakliyatmersin evden eve nakliyatantika eşya alantekne kiralamapoodleçankaya evden eve nakliyatataşehir evden eve nakliyatetimesgut evden eve nakliyatdis beyazlatmaçankaya evden eve nakliyatdilovası evden eve nakliyatantikaantika alanlarantikaGaziantep Evden Eve Taşımacılıkmağaza koku makinesieskişehir emlakEtimesgut evden eve nakliyatEtimesgut evden eve nakliyat
sahabetsahabet1xbetbahiscomsahabetbycasinoikimisliorisbetkaçak maç izlecasibom girişcasibom girişcasibom girişcasibom giriş twittercasibom girişcasibom girişNisanbet GirişCasibomAviator oynaCasinoslot girişgates of olympus demoDemo slot oynasugar rush demopradabetfestwinataşehir escortjojobetbetturkey